آئی ٹی کے شعبہ میں ہنر مند افرادی قوت تیار کرکے 100 ارب ڈالر کے غیر ملکی قرضوں سے نجات دلائیں گے۔ بشیر احمد فاروقی

سیاست عوامی مسائل

فیصل آباد (نمائندہ ایف ٹی وی) سیلانی ویلفیئر ٹرسٹ پاکستان کو خود کفیل فلاحی ریاست بنانے کیلئے کثیر الجہتی سماجی اور خیراتی منصوبوں پر عمل کر رہا ہے جس کے تحت نہ صرف نیشنل یونیورسٹی آف ٹیکنالوجی کے ذریعے سوئی سے لے کر جہاز تک پاکستان میں تیار کئے جائیں گے بلکہ آئی ٹی کے شعبہ میں ہنر مند افرادی قوت تیار کر کے ملک کو 100ارب ڈالر کے غیر ملکی قرضوں سے بھی نجات دلائی جائے گی۔ یہ بات سیلانی ویلفیئر ٹرسٹ کے روح رواں حضر ت مولانا بشیر احمد فاروقی نے فیصل آباد چیمبر آف کامرس اینڈانڈسٹری کے آڈیٹوریم میں سیلانی کے چھٹے سالانہ سمپوزیم سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔ انہوں نے کہا کہ 73سالوں سے پاکستان اپنی ضروریات کیلئے مختلف اشیاء درآمد کر رہا ہے جبکہ اب سیلانی نیشنل یونیورسٹی آف ٹیکنالوجی سے الحاق کے ذریعے ایسے ہنر مند سائنسدان تیار کرے گا جو درآمدات پر انحصار کو سو فیصد ختم کرنے کیلئے عملی جدوجہد کریں گے۔ سیلانی فاؤنڈیشن کے بارے میں مولانا بشیر احمد فاروقی نے بتایا کہ 1999ء میں اس ادارے کی بنیاد رکھی گئی جبکہ اِس کی ترقی میں اللہ سے تجارت کرنے والوں نے کلیدی کردار ادا کیا جس کی وجہ سے آج اِس کا سالانہ بجٹ 6.20ارب روپے تک پہنچ چکا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ابتدائی طور پر سیلانی نے نادارلوگوں کو کھانا کھلانے سے اپنے منصوبوں کا آغاز کیا تھا مگر آج بچے کی پیدائش سے وفات تک زندگی کے ہر شعبے میں خدمات سرانجام دی جا رہی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ بہت سے کام سیلانی اپنے ورکروں اور رضا کاروں کے ذریعے خود کر رہا ہے جبکہ خدمت خلق کے بہت سے کام آؤٹ سورس کئے گئے ہیں۔ انہوں نے سیلانی کے قیام کے بارے میں کہا کہ اس کی بنیادی تقویٰ پر رکھی گئی ہے جس کی وجہ سے یہ سلسلہ ان شاء اللہ قیامت تک جاری رہے گا. انہوں نے کہا کہ میں نے صدر پاکستان اور وزیر اعظم کو بتایا ہے کہ قابل لوگ آپ تک نہیں پہنچ سکتے اس لئے آپ کو خود اُن کی تلاش کرنا ہو گی۔ انہوں نے بتایا کہ اسی فارمولے کے تحت انہوں نے لنگر خانے اور پناہ گاہیں اُن کے سپرد کر دی ہیں۔ اب اِن پر اُن کا ایک پیسہ خرچ نہیں ہورہا مگر یہ ادارے بھی کامیابی سے چل رہے ہیں اور ان کی وجہ سے حکومت کی نیک نامی میں بھی اضافہ ہو رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ وہ آئی ٹی کے ہنر مند تیار کر رہے ہیں جو ان شاء اللہ پاکستان کو 100ارب ڈالر کما کے دیں گے۔ انہوں نے کہا کہ ملک کی 200یونیورسٹیاں صرف ڈگریاں چھاپ کر تقسیم کر رہی ہیں لیکن سیلانی نے ایسے نوجوان تیار کئے ہیں جو اپنے روزگار کے علاوہ ملک کیلئے بھی اربوں ڈالر کا زرمبادلہ کما رہے ہیں۔ مولانا نے کہا کہ انہوں نے وزیر اعظم سے درخواست کی ہے کہ وہ چیمبر کے لوگوں سے بار بار ملاقاتیں کریں تاکہ ملکی معیشت کو مضبوط، ٹھوس اور پائیدار بنیادوں پر استوار کیا جا سکے۔ انہوں نے بتایا کہ حکومت نے ایک کروڑ نوکریاں دینے کا اعلان کیا ہے۔ اس کیلئے حکومت کو یارن کی برآمد پر مکمل پابندی عائد کرنا ہو گی۔ انہوں نے کہا کہ یارن کی ویلیو ایڈیشن سے ہم ایک ڈالر سے مزید چار ڈالر کما سکتے ہیں مگر بدقسمتی سے 14ہزار کا بورا ظالموں نے چوبیس ہزار کا کر دیا ہے۔ حکومت کو ایسے لوگوں پر نظر رکھنی ہو گی جو ملک کو تباہ کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ٹیکسٹائل زرمبادلہ کمانے اور روزگار مہیا کرنے کا بہترین ذریعہ ہے اس لئے اس کی صلاحیتوں سے فائدہ اٹھانے کیلئے یارن کی برآمد پر مکمل پابندی عائد کرنا ہو گی۔ انہوں نے آئی ٹی کے شعبہ میں فیصل آباد کے بچوں کی صلاحیتوں کا اعتراف کیا اور بتایا کہ اِن میں سے چالیس بچوں کو ایوان صدر میں بلا کے اُن کی حوصلہ افزائی کی گئی۔ انہوں نے بتایا کہ 2018ء میں اُن کا بجٹ 4.4ارب تھا جو 2020ء میں بڑھ کر 6.2 ارب تک پہنچ گیا۔ انہوں نے اس سلسلہ میں ممتاز صنعتکار اظہر مجید کا ذکر کیا جو ہر ماہ 25لاکھ کا کھانا مہیا کر رہے ہیں۔ وفاقی پارلیمانی سیکرٹری میاں فرخ حبیب نے کہا کہ کار خیر کے کاموں سے روحانی آسودگی ملتی ہے اور وہ سیلانی کے بڑے مقصد کیلئے مولانا بشیر احمد فاروقی کے ادنیٰ کارکن کے طو ر پر کام کرنے کو تیار ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ دو روز قبل وزیر اعظم نے مولانا سے بات کی جنہوں نے فوری طو رپر موبائل وینز مہیا کر دیں جن کے ذریعے سیلانی بھوکوں کو کھانا مہیا کر رہا ہے انہوں نے بتایا کہ اُن کی درخواست پر فیصل آباد میں دو موبائل ویگنوں کے ذریعے لوگوں کو کھانا مہیا کرنے کا سلسلہ رمضان سے قبل ہی شروع کر دیا جائے گا اور یہ کام فیصل آباد کی دو شخصیات نے اپنے ذمہ لیا ہے۔انہوں نے مولانا فاروقی کی دور اندیشی کو بھی سراہا اور کہا کہ آئی ٹی کے شعبہ نے گزشتہ برس 1.3ارب کی برآمدات کیں جبکہ آئی ٹی سیکٹر کی گروتھ کی شرح 40فیصد ریکار ڈ کی گئی۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان کا شمار آئی ٹی کے شعبہ میں تیزی سے ترقی کرنے والے تین سر فہرست ملکوں میں ہوتا ہے۔ڈپٹی کمشنر محمد علی نے کہا کہ اللہ سے تجارت کرنے والے لوگوں کیلئے کامیابی یقینی ہے۔ انہوں نے بتایا کہ کرونا لاک ڈاؤن کے دوران 60بین الاقوامی پروازیں فیصل آباد آئیں ان میں سے ہوٹلوں میں ٹھہرنے والے 80فیصد لوگوں کو تین وقت کا کھانا سیلانی نے مہیا کیا۔ انہوں نے بتایا کہ فیصل آباد میں 47آر او پلانٹ خراب تھے۔ سیلانی نے ان میں سے 42کو چالو کر دیا ہے جبکہ غربت کے خاتمے کیلئے طویل المدتی پروگرام کے تحت نوجوانوں کو ٹیکنیکل اور ووکیشنل ٹریننگ دی جا رہی ہے۔ فیصل آباد چیمبر آف کامرس اینڈانڈسٹری کے صدر انجینئر حافظ احتشام جاوید نے سورۃ فجر کی آیت مبارکہ کی تلاوت کی جس کا مفہوم یہ تھا کہ بھوکے کو کھانا کھلانا اللہ سے قربت کا بہترین ذریعہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ اللہ تعالیٰ نے پاکستان کو بہترین افرادی قوت سے نوازا ہے جس کو ہنر مند بنا کے ہم ترقی کی رفتار کو مزید تیز کر سکتے ہیں۔ یارن کی قلت کے حوالے سے انہوں نے کہا کہ وہ گزشتہ 3ماہ سے اس مسئلہ کو اٹھا رہے ہیں۔ انہوں نے اندرون ملک قلت کے باوجود یارن کی برآمد کو ملک سے عملاً فراڈ قرار دیا اور کہا کہ ویلیو ایڈیشن کے ذریعے نہ صرف مہنگائی اور غربت کم ہو گی بلکہ ملک کوبھی خوشحال بنایا جا سکے گا۔ انہوں نے بتایا کہ کاٹن میں وسکوس کی ملاوٹ کا سلسلہ بھی جاری ہے جس کی وجہ سے ٹیکسٹائل کی برآمد پر منفی اثرات مرتب ہوں گے۔ انہوں نے سیلانی کے فلاحی پروگراموں کو بھی سراہا اور یقین دلایا کہ وہ بھی اس میں بھر پور حصہ ڈالیں گے۔ فیڈریشن آف پاکستان چیمبرز آف کامرس اینڈانڈسٹری کے سابق صدر میاں محمد ادریس نے مہمانوں کا خیر مقدم کرتے ہوئے کہا کہ منظم انداز میں کارخیر کے کاموں کو کرنا بہت کٹھن مرحلہ ہے جسے مولانا فاروقی انتہائی احسن انداز سے آگے بڑھا رہے ہیں۔ آخر میں مولانا بشیر احمد فاروقی نے دعائے خیر کرائی اور میاں فرخ حبیب، انجینئر حافظ احتشام جاوید، سینئر نائب صدر چوہدری طلعت محمود، میاں اظہر مجید شیخ اور رضوان اشرف کو سیلانی کی اعزازی شیلڈ یں پیش کیں۔ اس موقع پر سیلانی کے بارے میں ایک دستاویزی فلم بھی دکھائی گئی۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے